وزیر اعظم آزاد کشمیر کا پرائمری سکولوں میں درسی کتب دینے کا اعلان محکمہ تعلیم کے کلرک بادشاہوں اور اعلیٰ افسران کی ملی بھگت سے رپشن کی نذرہونے کااندیشہ۔درسی کتب تقسیم کرنے کیلئے بنائی گئی لسٹیں پسند و نا پسند کی بنیاد پر بنائی گئیں۔سونے پر سہاگہ لسٹ میں زیادہ تر گھوسٹ سکول بھی شامل کئے گئے۔عوام علاقہ نے کہا ہے کہ وزیراعظم آزاد کشمیر اور وزیر تعلیم اس کرپشن کا نوٹس لیں اور کتابیں حق دارں تک پہنچائی جائیں۔تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم آزاد کشمیر کا پرائمری سکولوں میں درسی کتب مفت دینے کا اعلان ہوائی ثابت ہوا۔ محکمہ تعلیم تمام سکولوں میں پرائمری کے بچوں کو کتابیں دینے کی بجائے مخصوص سکولوں کو لسٹ میں شامل کیا گیاہے ۔محکمہ تعلیم کے کلرک بادشاہوں نے اس اعلان کو بھی اپنی کرپشن کا ذریعہ بنانے کی کوشش ۔ بعض گھوسٹ سکول بھی اس لسٹ میں شامل کر لئے گئے ہیں جو منگلا اپ ریزنگ کے دوران ڈیم برد ہو گئے یا پھر ایسے سکول شامل کئے گئے جو بعض وجوہات کی بناء پر بند کر دئیے گئے تھے۔ محکمہ تعلیم کا عملہ لسٹیں بھی چھپا رہا ہے۔چند مخصوص لوگوں کے علاوہ میڈیا اور عوام کے ساتھ شئیر نہیں کی جا رہیں۔ عوام علاقہ نے محکمہ تعلیم کے کلرکوں اور افسران کے رویے کے خلاف شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ کتابیں ان سکولوں میں تقسیم کی جائیں جہاں بچے تعلیم حاصل کر رہے ہیں۔ عوام کو کتابوں کی تقسیم کے بجٹ سے بھی آگاہ کیا جائے تا کہ محکمہ تعلیم کے ارباب اختیار کی کرپشن کھل کر سامنے آ سکے۔